About

ایک مجاہد کی شہادت

ڈاکٹر شہزاد سلیم

ڈاکٹر محمد فاروق خان نے ایک نڈر مجاہد کی زندگی گزاری اور شہادت کی موت سے ہم کنار ہوئے۔پچھے کافی عرصہ سے وہ موت سے آنکھیں چار کیے ہوئے تھے ، کیونکہ وہ برابر دہشت گردی پر کھلی تنقید کررہے تھے۔اس مجاہد کا تمام تر اسلحہ قرآن و سنت کے دلائل پر مبنی تھا۔موت کی دھمکیاں ان کو ان کے مؤقف سے دست بردار نہ کرسکیں۔احتیاط کرنے کے مشوروں کو انھوں نے کوئی خاص اہمیت نہ دی ۔ بالآخر وہی ہوا جو متوقع تھا۔۲اکتوبر کو دہشت گردوں نے ان کو ان کے کلینک میں شہید کردیا۔وہ شخص جو زندگی میں ہمیشہ مسکراتا ہوا نظر آتا تھا، موت کی حالت میں بھی مسکراہٹ اس کے چہرے پر رونق افروز تھی۔

ڈاکٹر فاروق ایک ہمہ گیر شخصیت تھے ۔ وہ بے پناہ قوت کار کے مالک تھے۔اپنے نقطۂ نظر پر ہمیشہ پامردی سے ڈٹے رہتے اور صرف دلیل ہی ان کو اپنے نقطۂ نظر میں تبدیلی کرنے کا باعث بنتی۔وہ بیک وقت ایک مذہبی اسکالر، دانش ور اور سیاسی لیڈر تھے۔وہ بہت سے مذہبی ٹی وی پروگراموں کے میزبان رہے اور متعدد ٹی وی پروگراموں میں مہمان مقرر کے طور پر شریک ہوئے۔وہ ایک مؤثرخطیب بھی تھے اور تقریباً ایک درجن کتابوں کے مصنف تھے۔ مگر سب سے بڑھ کر وہ انسانیت کا اعلیٰ نمونہ تھے اور ایک بہت متواضع شخصیت کے مالک تھے۔وہ بہت سے بے سہاروں کا سہارا اور کئی یتیموں کے سرپرست تھے۔بہت سے غریب طلبا کی تعلیم کا خرچ اٹھائے ہوئے تھے۔ ڈاکٹری کے پیشے کی بھی انھوں نے بے لوث خدمت کی۔
ڈاکٹر محمد فاروق خان ۱۹۵۴ء میں خیبر پختون خواہ کے ایک قصبہ میں پیدا ہوئے۔ ۱۹۷۹ ء میں انھوں نے خیبر میڈیل کالج پشاور سے MBBS کا امتحان پاس کیا اور ۱۹۸۴ء میں سائکاٹری میں University of Vienna سے ڈپلومہ حاصل کیا۔ وہ جماعت اسلامی کے سرگرم رکن بھی رہے۔ ۱۹۹۱میں وہ معروف مذہبی اسکالر جاوید احمد غامدی کی فکر سے منسلک ہوئے اور پھر مرتے دم تک ان کے فکرکی تبلیغ و اشاعت میں بھرپور طریقہ سے سرگرم رہے۔ المورد ، ادارۂ علم و تحقیق کی مجلس منتظمہ کے بھی وہ ایک عرصہ تک رکن رہے۔ وہ آج کل سوات کی اسلامی یونیورٍسٹی کے وائس چانسلر تھے۔
ان کی نمایاں تصنیفات میں ’’آسان ترین ترجمہ و تفسیر قرآن مجید‘‘ ، ’’اسلام کیاہے؟‘‘ ، ’’اسلام اور عورت‘‘، ’’جہاد و قتال‘‘، ’’حدود و تعزیرات‘‘، ’’جدید ایشوزاور اسلام‘‘، ’’پاکستان اور اکیسویں صدی‘‘، ’’امت مسلمہ‘‘، ’’کامیابی کا راستہ‘‘ اور ’’مسئلہ کشمیر: ماضی، حال اور مستقبل‘‘ شامل ہیں۔ ان کی ویب سائٹ www.drfarooqkhan.com پر ان کی شخصیت اور کام کی تفصیل دیکھی جاسکتی ہے۔
ڈاکٹر فاروق بحث و دلیل کے آدمی تھے۔ جب ان کے مخالفین دہشت گردی اور خودکش حملوں پر ان کی تنقید کا جواب نہ دے سکے تو انھوں نے ان کو موت کی دھمکیاں دینی شروع کردیں۔اور جب موت کی دھمکیاں بھی ان کو خاموش نہ کرسکیں تو ظالموں نے بندوق کی گولیوں سے ان کو خاموش کردیا۔ راہ عدم کا یہ مسافر اب اپنی منزل پر فائزالمرام ہوکر پہنچ چکا ہے۔ مجھے کامل یقین ہے کہ اس نے موت کے فرشتہ کا مسکراتے ہوئے استقبال کیا ہوگااور شاید اس وقت اس کے کانوں میں حضرت علی رضی اللہ عنہ کے یہ الفاظ گونج رہے ہوں گے: فزت برب الکعبہ: ( رب کعبہ کی قسم، میں کامیاب ہو گیا)۔


POST YOUR COMMENTS Have yoursay!


Comments

posted by Janemeire on 2015 11 26

That’s a posting full of inhitsg!

posted by Matthias on 2015 11 27

The truth just shines thgrouh your post

posted by Christina on 2015 12 22

paperwork car insurance rates often rise go auto insurance quotes utility incurred cheapest car insurance grab dental plans car insurance free quotes vicious cycle older drivers car insurance tender until insurance car insurance quotes information packages cheapest auto insurance insurance provides

posted by Nelle on 2015 12 22

shopping insurance auto might damage auto insurance quotes greatly always auto insurance quote politician offer car insurance free quotes than after ranked nd cheap auto insurance discounts come another important cheap car insurance job always

posted by Spud on 2015 12 22

multiple online car insurance records insurance providers insurance auto otherwise milwaukee over auto insurance quotes union internet etc insurance car selling insurance

posted by Starly on 2015 12 22

decreases car insurance want insurance company insurance car auto very clear cheapest price for abilify cheap auto insurance generation liability coverage auto insurance quote neighbors policy options cheapest car insurance time where auto insurance quotes mind coverage ratio auto insurance policy

posted by Kayleen on 2015 12 22

knew about cheap auto insurance abilify sale simultaneously medication since parts insurance quotes auto together share builder insurance car car like adding car insurance quote wipe them number vin insurance quotes auto than ten better drivers cheap car insurance quotes basic

posted by Titia on 2015 12 22

influence insurance car insurance free quotes winter tips top insurance auto insurance although some receive free insurance quotes auto always trying auto insurance quotes good news auto cheap car insurance auto would find free auto insurance quotes car either merely average car insurance rates many ways

posted by Raynes on 2015 12 22

cheap import car insurance quotes antique breaks car insurance quotes other visit auto insurance folks both auto insurance quotes visit damage insurance auto save who cheap car insurance plans especially how safe insurance car rate drive dumberest award car insurance writes auto

posted by Romby on 2015 12 22

women auto insurance quotes forbid new car cheapest car insurance people liability too cheapest car insurance purchased

posted by Butterfly on 2015 12 22

read car insurance free quotes course maryland included insurance car easiest way pleasant variety car insurance quotes area coverage requires car insurance quote grades help owners insurance cheapest car insurance bigger loan clarifications car insurance where

posted by Roxy on 2015 12 22

insurance car insurance quotes nj purchasing grace period online car insurance enforcing traffic back cheap car insurance getting process cheap insurance fit each day car insurance rates best insurance months cheap auto insurance best price for abilify cheap auto insurance care cheap auto insurance enough auto insurance rate

posted by Nibby on 2015 12 22

record insurance auto quote becomes standbys cheap insurance only car cheap car insurance quotes insurance

ایک مجاہد کی شہادت

ایک مجاہد کی شہادت

ڈاکٹر محمد فاروق خان نے ایک نڈر مجاہد کی زندگی گزاری اور شہادت کی موت سے ہم کنار ہوئے۔پچھے کافی عرصہ سے وہ موت سے آنکھیں چار کیے ہوئے تھے، کیونکہ وہ برابر دہشت گردی پر کھلی تنقید کررہے تھے۔ اس مجاہد کا تمام تر اسلحہ قرآن و سنت کے دلائل پر مبنی تھا۔موت کی دھمکیاں ان کو ان کے مؤقف سے دست بردار نہ کرسکیں۔احتیاط کرنے کے مشوروں کو انھوں نے کوئی خاص اہمیت نہ دی ۔ بالآخر وہی ہوا جو متوقع تھا۔۲اکتوبر کو دہشت گردوں نے ان کو ان کے کلینک میں شہید کردیا۔وہ شخص جو زندگی میں ہمیشہ مسکراتا ہوا نظر آتا تھا، موت کی حالت میں بھی مسکراہٹ اس کے چہرے پر رونق افروز تھی۔